کچے گھر و ں سے نکلیں گے آ فتا ب

 ا ر شد سلہر ی
پا کستا ن کی سیا سی پا ر ٹیو ں بشمو ل د ا ئیں ا و ر با ئیں با ز و ا س  وقت کو ئی بھی سیا سی پا ر ٹی عو ا می مسا ئل کے حل کے لئے آ و ا ز بلند کر ر ہی ہے ا و ر نہ ہی عو ا می مسا ئل کے حل کیلئے کو شا ں ہے ۔ تما م تر سیا سی پا ر ٹیا ں ا و ر ا ن کی قیا د ت ا قتد ا ر کی جنگ میں مصر و ف ہیں جبکہ حکمر ا ن طبقہ غیر ضر و ر ی ا یشو ز کو ا ٹھا کر عو ا می مسا ئل سے  نظر یں چر ا نے کی پا لیسی پر عمل پیر ا ہے ۔ جبکہ د و سر ی جا نب عو ا م میں بھی عجیب قسم کا جمو د پا یا جا تا ہے ۔ عو ا می حلقو ں میں ا نفر ا د ی سطح پر حکمر ا نو ں سمیت سیا سی جما عتو ں پر شد ید تنقید کی جا تی ہے لیکن منظم ا ند ا ز میں ا جتما عی طو ر پر کو ئی قد م ا ٹھا نے کو تیا ر نظر نہیں آ تا ہے ۔ سیا سی بے حسی ا س قد ر پید ا ہو چکی ہے کہ عا م لو گ ا س ا مر کے با ر ے سو چنا بھی نہیں چا ہتے ہیں ۔ ا س میں سا ر ا قصو ر ا و ر شر منا ک عمل سیا سی جما عتو ں ا و ر ا ن کی قیا د ت  کا ہے جنہو ں نے سیا سی نظر یا ت کی بجا ئے چھو ٹے چھو ٹے مفا د ا ت کے گر د سیا ست کو ر و ا ج د یا ا و ر سیا سی و مذ ہبی منا فر ت کو ہو ا د یکر ا پنے سیا سی مقا صد حا صل کر نے کی کو شش کی ہے جو کہ سما ج کیلئے ا نتہا ئی خطر نا ک ہے ۔آ ج  سما ج سیاسی بے ر ا ہ ر و ی ا و ر ا نتشا ر کا شکا ر بن چکا ہے جس کے نتا ئج آ ج ہمیں طا لبا ن کے بے شما ر گر و پس کی صو ر ت میں د یکھنا پڑ ر ہے ہیں ۔ نو جو ا ن نسل کو بعض سیا سی پا ر ٹیو ں ا و ر لیڈ ر و ں نے ما یو س کیا ہے بلکہ ا نہیں گمر ا ہی کی ر ا ہ بھی د کھا ئی ہے ۔ و ہ نو جو ا ن جو بڑ ے جنو ن کے  سا تھ مید ا نِ سیا ست میں ا تر ے تھے و ہ آ ج ما یو سی کا ا ظہا ر کر ر ہے ہیں ۔ پا کستا ن کی سیا سی قیا د ت پر بد ا عتما دی تو کر ر ہے ہیں تشو یش نا ک ا مر یہ ہے کہ بعض جو شیلے نو جو ا ن پا کستا ن سے بھی نا ر ا ض ہیں ا و ر و ہ سمجھتے ہیں کہ پا کستا نے ا ن کو کچھ نہیں د یا ہے ۔ و ہ جس جو ش کے سا تھ ملک کی تقد یر بد لنے نکلے تھے ا نہیں  سنبھا لنا ا و ر ا ن کی تر بیت کی ضر و ر ت تھی ا و ر ا نہیں قیا د ت کے طو ر پر لا یا جا نا چا ہئے تھا ۔ لیکن ا فسو س صد ا فسو س کہ تحر یکِ ا نصا ف نے ا نہیں نہ صر ف ما یو س کیا بلکہ ا ن کے سا تھ د ھو کاکیا گیا ۔ نعر ے ، جھنڈ ے لہر ا نے ا و ر جلسو ں کی ر و نقیں بڑ ھا نے کے لئے ا نہیں ا یند ھن تو بنا یا گیا لیکن قیا د ت پیشہ و ر سیا ستدا نو ں سر ما یہ د ا ر و ں ا و ر جا گیر د ا ر و ں کے ہا تھو ں میں تھما د ی ۔ عمر ا ن خا ن نے سیا سی نا ا ہلی کا مظا ہر ہ کیا یا و ہ نو جو ا نو ں سے ہا تھ کر گئے ہیں ۔ پا کستا ن کے نو جو ا نو ں سے یہ ا یک بہت بڑ ا فر ا ڈ ہو ا ہے، جس کی تلا فی ا تنی جلد ی شا ید ممکن نہ ہو سکے ۔ یہ ا یک گہر ا ز خم ہے ۔ نو جو ا نو ں کو چا ہئے کہ و ہ تقلید  پسندی چھو ڑ د یں خو د آ گے بڑ ھیں ا و رخو د قیا د ت کا کر د ا ر ا د ا کر یں ۔ قو مو ں کی ز ند گیو ں میں تبد یلی یا ا نقلا ب ا س و قت ہی آ تا ہے جب ا س قو م کے  نو جو ا ن خو د قا ئد ا نہ صلا حیتو ں کا ا ظہا رکر یں ا و ر خو د لیڈ ر بنیں ۔ ا گر ر و ش بر قر ا ر ر ہتی ہے تو بھر کو ئی ا و ر عمر ا ن خا ن نو جو ا ن نسل کو ا ستعما ل کر کے  حکومتی ا یو ا نو ں تک پہنچ جا ئے گا ا و ر نو جو ا ن پھر منہ  دیکھتے  ر ہ جا ئیں گے ۔ پی ٹی آ ئی نو جو ا نو ں کی جما عت نہیں ر ہی ہے ا و ر نہ ہی ا س کا سیا سی نظر یہ  وہ رہا  ہے ۔ پی ٹی آ ئی ا ب د ا ئیں با ز و کی مصا لحت پسندجما عت بن چکی ہے ۔ نو جو ا نو ں کو پی ٹی آ ئی کے ا س یو ٹر ن کو سمجھنے کی ضر و ر ت ہے ا و ر ا پنا ا لگ محا ذ بنا ئیں ۔ عا م آ د می پا ر ٹی پا کستا ن کا قیا م بھی پی ٹی آ ئی کیا س یو ٹر ن کا ر دِ عمل ہے۔ عا م آ د می پا ر ٹی پا کستا ن نے پا ر ٹی ڈ ھا نچو ں کی تشکیل کا ا یک ا یسا میکا نز م مر تب کیا ہے جس کے تحت پا ر ٹی کا کو ئی بھی ممبر ر کا و ٹ کے بغیر پا ر ٹی کے ا علیٰ عہد و ں تک جا سکتا ہے ا و ر تما م تر پا ر ٹی ا ختیا ر ا ت عا م ر کن کے پا س ہیں ۔ ا گر عا م ر کن چا ئے گا تو پا ر ٹی پا لیسی بن سکے گی ا و ر پا ر ٹی کے فیصلے ہو سکیں گے ۔ پا ر ٹی کا کو ئی فیصلہ کا ر کنا ن کی مر ضی کے بغیر نہیں ہو گا ۔ پا ر ٹی کی طا قت کا سر چشمہ کا ر کن ہیں ا و ر کا ر کن ہی  فیصلہ سا ز قو ت ا و ر پا لیسی میکر ہیں۔ د و سر ی جما عتو ں کی طر ح کا ر کن محض نعر ے لگا نے ، جھنڈ ے لہر ا نے ا و ر جلسو ں کی ر و نقیں بڑ ھا نے کے کا م نہیں آ ئیں گے بلکہ پا کستا ن کی تا ر یخ کا یہ پہلا مو قع ہو گا کہ  کا ر کن ہی قیا د ت ہو نگے ا و ر قیا د ت ہی کا ر کن ہو گی ۔ پا ر ٹی کے ہر فعا ل ممبر کو و یٹو کا حق حا صل ہو گا و ہ کسی بھی فیصلے کو و یٹو کر سکے گا  ا و ر جب تک ا س کا ر کن کی با ت تسلیم نہیں ہو گی پا ر ٹی کا کو ئی ا جلا س آ گے نہیں بڑ ھے گا ا و ر نہ ہی کو ئی فیصلہ صا د ر کیا جا سکے گا ،  یہ  طاقت پا کستا ن سمیت د نیا بھر میں کو ئی سیا سی پا ر ٹی کا ر کنو ں کو نہیں د یتی ہے ۔ یہ د نیا کی تا ر یخ کا پہلا معجز ہ ہو گا کہ عا م آ د می پا ر ٹی پا کستا ن ا پنے کا ر کنو ں ا و ر ممبر ا ن کو و یٹو کا حق  د ے ر ہی ہے ۔ ا و ر ممبر ا ن و کا ر کنا ن کے فیصلو ں کو مقد م ر کھتی ہے ۔ ا سی کا نا م تبد یلی ا و ر ا نقلا ب ہو تا ہے ۔ شخصیت پر ستی ا و ر با لا با لا فیصلو ں سے تبد یلی ممکن ہو تی ہے ا و ر نہ ہی ا نقلا ب آ تے ہیں ۔ ا ہم تر ین ا مر یہ ہے کہ عا م آ د می پا ر ٹی پا کستا ن نے ا یک حد مقر ر کر د ی ہے کہ کو ن پا ر ٹی کا ممبر بن سکتا ہے  ا و ر کو ن پا ر ٹی کے ا د ا ر و ں میں جا سکتا ہے، ا یسا نہیں ہو گا کہ پی ٹی آ ئی یا د یگر جما عتو ں کی طر ح جو ز یا د ہ ما لد ا ر ہے و ہ پا ر ٹی کے ا علیٰ عہدوں پر بر ا جما ن ہے ا و ر جس نے پا ر ٹی کے لئے د ن ر ا ت محنت کی ہے و ہ پچھلی سیٹو ں پر بیٹھا ہے ۔ پا ر ٹی میں و ہی مقد م ہو گا جس نے پا ر ٹی کے لئے ز یا د ہ محنت کی ہے ۔ معیا ر ا و ر میر ٹ ، سیا سی تعلیم ، پا ر ٹی کی ممبر سا ز ی ، تنظیم سا ز ی ا و ر ا خلا ص ہو گا د و لت نہیں ہو گی ۔ عا م آ د می پا ر ٹی پا کستا ن حقیقی معا نو ں میں عا م نو جو ا نو ں کو قیا د ت کے طو ر پر ا بھا ر ے گی ا و ر پا ر ٹی کا ہر ر کن ا پنی صلا حیت کا لو ہا منو ا سکے گا جس کے آ گے کو ئی د یو ا ر نہیں ہو گی ۔ ا گر کو ئی د یو ا ر ہو گی تو و ہ گر ا د ی جا ئے گی ۔ کچھے گھر و ں سے پھو ٹیں گے آ فتا ب ۔  انشا ء ا ﷲ  

About aapakistan

We are not saying that every single politician is corrupt and greedy. There are many good intentioned people in politics today who want to work honestly for the people of Pakistan. But the current system of polity does not allow honest politicians to function. We are also not claiming that every single person who joins our party will be hundred percent honest. We are saying that it is the system that has become very corrupt and needs to be changed immediately. Our aim in entering politics is not to come to power; we have entered politics to change the current corrupt and self-serving system of politics forever. So that no matter who comes to power in the future, the system is strong enough to withstand corruption at any level of governance.
This entry was posted in Uncategorized. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Please log in using one of these methods to post your comment:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s